Chat GPT popularity, Google worried

Chat GPT popularity, Google worried


 گوگل  کی  اجارہ داری  کو خطرہ لاحق ، مائیکرو سافٹ کے  تہلکہ خیز چیٹ باٹ کی بے پنا ہ مقبولیت ، ایک ہفتے میں 10 لاکھ سے زائد صارفین استعمال کرنے لگے ۔

 رپورٹ کے مطابق مصنوعی ذہانت پر تحقیق کرنے والی کمپنی اوپن اے آئی کی جانب سے نومبر کے اواخر میں چیٹ جی پی ٹی کے نام سے ایک چیٹ باٹ لانچ کیا گیا تھا جسے ایک ہفتے کے اندر 10 لاکھ سے زیادہ صارفین نے استعمال کرنا شروع کر دیا تھا۔

تاہم کمپنی نے خبردار کیا ہے کہ چیٹ جی پی ٹی سے صارفین کو ان کے سوالات کے متنازع جوابات بھی مل سکتے ہیں اور اس کا رویہ کچھ معاملات میں متعصبانہ بھی ہو سکتا ہے۔تاہم اس وقت سوشل میڈیا پر نوجوان طلبا اے آئی چیٹ بوٹ سے سب سے زیادہ خوش ہیں کیونکہ اب انھیں لگتا ہے کہ ان کے لیے سکول، کالج یا یونیورسٹی کا کام کرنا مزید آسان ہو جائے گا۔یہی وجہ ہے امریکی ریاست نیویارک کی جانب سے سکولوں میں چیٹ جی پی ٹی پر پابندی عائد کی گئی ہے تاکہ بچے صرف اسی پر انحصار کرتے ہوئے کام نہ کریں۔
کمپنی ’اوپن اے آئی‘ کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’ہم صارفین سے فیڈ بیک حاصل کرنے کے لیے کوشاں ہیں تاکہ اس نظام میں بہتری لائی جا سکے۔چیٹ جی پی ٹی دراصل کمپنی کی جانب سے مصنوعی ذہانت کی بنیاد پر بنائے سافٹ ویئرز میں تازہ ترین اضافہ ہے جسے کمپنی کی جانب سے جینرویٹو پری ٹرینڈ ٹرانسفورمر یا جی پی ٹی کہا جا رہا ہے۔

چیٹ جی پی ٹی سے اگر آپ کوئی بھی سوال پوچھیں تو یہ آپ کو اس حوالے سے ایک مفصل اور بہتر جواب دینے کی صلاحیت رکھتا ہے۔چاہے آپ اس سے کوئی نظم لکھوائیں یا اپنے سکول کی اسائنمنٹ میں رہنمائی حاصل کریں، یہ سافٹ ویئر آپ کو اکثر مایوس نہیں کرے گا۔
اس کے ایک پچھلے ورژن کو انسانوں کے ساتھ بات چیت کے ذریعے بہتر بنانے کی کوشش کی گئی تھی۔ ایلون مسک کی جانب سے کی گئی ایک ٹویٹ کے مطابق اس نظام کو ٹوئٹر کے ڈیٹا کے ذریعے بھی سیکھنے کا موقع دیا گیا تھا۔خیال رہے کہ اوپن اے آئی کے بانی اراکین میں ٹیسلا اور ٹوئٹر کے مالک ایلون مسک بھی شامل تھے تاہم اب وہ اس کے بورڈ میں شامل نہیں تاہم انھوں نے بعد میں لکھا کہ انھوں نے ’فی الحال‘ ڈیٹا کی رسائی روک دی ہے۔

اس سے حاصل ہونے والے نتائج نے اکثر افراد کو خوشگوار حیرت میں مبتلا کیا ہے۔ اوپن اے آئی چیف ایگزیکٹو سیم آلٹمین کی ایک ٹویٹ میں چیٹ جی پی ٹی کی خامیوں کا بھی ذکر کیا گیا ہے اور اس میں بہتری لانے کے لیے لوگوں سے مدد کی اپیل بھی کی جاتی ہے۔اوپن اے آئی کا کہنا تھا کہ اس چیٹ فارمیٹ میں مصنوعی ذہانت کو ’سوالات پوچھنے، اپنی غلطی تسلیم کرنے، غلط سوچ کو چیلنج کرنے اور غیر مناسب سوالات کو مسترد کرنے کی بھی آزادی ہوتی ہے۔‘
میشیبل نامی ٹیکنالوجی نیوز ویب سائٹ سے منسلک صحافی مائیک پرل نے چیٹ جی پی ٹی استعمال کیا اور ان کا کہنا ہے کہ اس ماڈل سے متنازع باتیں اگلوانا مشکل ہے۔مائیک پیرل نے لکھا کہ ’اس کا دقیانوسی باتوں سے گریز کرنے کا نظام بہت مؤثر ہے۔‘

تاہم اوپن اے آئی نے خبردار کیا ہے کہ ’چیٹ جی پی ٹی کبھی کبھار بظاہر درست محسوس ہونے والے لیکن غلط اور متنازع جوابات لکھ دیتا ہے۔کمپنی کا کہنا ہے کہ اگر ہم اس ماڈل کو مزید محتاط ہونے کی ٹریننگ دیں تو پھر یہ ان سوالوں کے جواب دینے سے بھی گریز کرتا ہے جن کے درست جوابات اسے معلوم ہوتے ہیں۔

 

Ref

Advertisement


Advertisement